SC wraps up suo motu case of Naqeeb murder 41

نقیب قتل کیس؛ راﺅ انوار ایک ماہ کے جسمانی ریمانڈ پرپولیس کے حوالے

کراچی: انسداد دہشت گردی کی عدالت نے نقیب اللہ قتل کیس میں ملوث ملزم راﺅ انوار کو ایک ماہ کے لیے جسمانی ریمانڈ پر پولیس کے حوالے کردیا۔

انسداد دہشت گردی کی عدالت میں نقیب اللہ قتل کیس کی سماعت ہوئی، اس دوران ڈی ایس پی قمراحمد سمیت 10 پولیس اہلکاروں کو عدالت میں پیش کیا گیا تاہم راؤانوار کو عدالت میں پیش نہیں کیا جاسکا۔ راؤانوار کی عدم پیشی سے متعلق عدالت کے استفسار پر ایس پی انویسٹی گیشن ملیر عابد قائم خانی نے کہا کہ راؤانوار کو انسدادِ دہشت گردی کی منتظم عدالت میں پیش کیاجارہا ہے انہیں اگلی سماعت پر پیش کردیا جائے گا، عدالت نے تفتیشی افسر کی استدعا مسترد کرتے ہوئے حکم دیا کہ راﺅ انوار کو یہاں پیش کیا جائے۔

سماعت میں وقفہ کے بعد معطل ایس ایس پی ملیر راﺅ انوار کو انسداد دہشت گردی کراچی کی عدالت میں پیش کردیا گیا، اس موقع پر سیکیورٹی کے سخت انتظامات کیے گئے تھے جب کہ عدالت کے اطراف رینجرز اور پولیس کی اضافی نفری بھی تعینات تھی۔ نقیب اللہ قتل کیس کی سماعت بند کمرے میں کی گئی، انسداد دہشت گردی عدالت کی جج نے ہدایات کرتے ہوئے کہا کہ صحافیوں کو کمرہ عدالت میں داخل ہونے کی اجازت نہیں لہذا میری عدالت میں کوئی صحافی داخل نہ ہو۔

تفتیشی افسر نے عدالت سے استدعا کرتے ہوئے کہا کہ سیکیورٹی کا معاملہ ہے لہذا راﺅ انوار کو 30 روزہ ریمانڈ پر دیا جائے،بار بار پیشی سے ملزم کو سیکیورٹی خدشات لاحق ہوں گے۔ عدالت نے تفتیشی افسر کی استدعا منظور کرتے ہوئے راﺅ انوار کو 21 اپریل تک جسمانی ریمانڈ پر پولیس کے حوالے کردیا۔

واضح رہے کہ نقیب اللہ قتل کیس میں انسداد دہشت گردی عدالت نے ملزم راﺅ انوار سمیت دیگر مفرور ملزمان کے ناقابل ضمانت وارنٹ گرفتاری جاری کیے تھے۔ گزشتہ روز ملزم راﺅ انوار کو اسلام آباد سے گرفتار کرکے کراچی لایا گیا تھا۔ معطل ایس ایس پی ملیر راﺅ انوار سپریم کورٹ میں پیش ہوئے تھے جہاں چیف جسٹس کے حکم پر انہیں گرفتار کرلیا گیا۔ بعد ازاں انہیں کراچی لایا گیا اور سخت سیکیورٹی میں بکتر بند گاڑی میں بٹھا کر ملیر کینٹ تھانے منتقل کردیا گیا۔

ملزم راﺅ انوار پر جعلی مقابلے میں نقیب اللہ سمیت 4 افراد کے قتل اور جھوٹے مقدمات قائم کرنے کا الزام ہے۔ راﺅ انوار 19 جنوری کو جے آئی ٹی کی ٹیم کے روبرو آخری بار پیش ہوئے جس کے بعد راﺅ انوار اور ان کے ساتھی فرار ہوگئے تھے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں