After intense pressure and criticism, President Trump finally put on a mask 70

شدید دبائواور تنقید کے بعد بالآخر صدر ٹرمپ نے ماسک پہن ہی لیا

واشنگٹن: دنیا میں کرونا وبا سے سب سے زیادہ متاثرہ ملک امریکہ کے صدر پر دبائو تھا کہ وہ صحت عامہ کے لیے مثال قائم کرتے ہوئے عوامی سطح پر ماسک کا استعمال کریں جب کہ ماسک پہننے سے انکار پر ان کو کئی بار شدید تنقید کا سامنا بھی کرنا پڑا۔

صدر ٹرمپ کو اس وقت فیس ماسک کے ساتھ دیکھا گیا جب وہ زخمی فوجیوں کی عیادت کے لیے ہفتے کو واشنگٹن کے قریب والٹر ریڈ ملٹری ہسپتال پہنچے۔

خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق صدر ٹرمپ نے اس موقعے پر سیاہ رنگ کا ماسک پہن رکھا تھا جس پر امریکی صدارتی مہر کا لوگو واضح تھا۔

ٹرمپ اس موقعے پر صحافیوں سے بات کرتے ہوئے کہا: ’میں کبھی بھی ماسک کے خلاف نہیں رہا لیکن مجھے یقین ہے کہ ان کو مخصوص وقت اور جگہوں پر ہی استعمال کیا جاتا ہے۔‘

امریکی میڈیا رپورٹس میں بتایا گیا کہ نومبر میں ہونے والے انتخابات اور امریکہ میں کرونا کے بڑھتے ہوئے کیسز کی تعداد میں ہوشربا اضافے کے تناظر میں صدر ٹرمپ کے معاونین نے ان سے عملی طور پر ماسک پہننے اور کم از کم ایک بار ماسک کے ساتھ تصاویر بنوانے کی درخواست کی تھی۔

صدر ٹرمپ نے وبائی مرض سے نمٹنے کے لیے اپنی انتظامیہ کے اقدامات کا دفاع کیا ہے حالانکہ امریکہ دنیا کا سب سے زیادہ متاثرہ ملک ہے جہاں حال ہی میں ایک روز کے دوران 60 ہزار سے زیادہ نئے کیس دیکھے گئے ہیں۔

امریکہ میں اتوار تک کرونا کے ساڑھے 33 لاکھ سے زیادہ کیس اور ایک لاکھ 37 ہزار اموات رپورٹ ہو چکی ہیں جس کے بعد کئی ریاستوں میں معاشی سرگرمیاں دوبارہ معطل کر دی گئی ہیں۔

اتنی سنگین صورت حال کے باوجود امریکہ میں ماسک پہننے یا نہ پہننے پر گہری تقسیم واضح ہے اور یہ ایک طرح کا سیاسی مسئلہ بن گیا ہے۔

ٹرمپ کے حامی قدامت پسندوں کی اکثریت ماسک پہننے سے انکار کرتی ہے جب کہ ترقی پسند اسے زندگی اور موت کا مس?لہ اور اجتماعی ذمہ داری کے طور پر ماسک پہننے کی حمایت کرتے ہیں۔

امریکہ میں صحت کے حکام عوام کو مشورہ دیتے ہیں کہ اگر وہ سماجی دوری اختیار نہیں کرتے تو کم از کم عوامی مقامات پر ماسک کا استعمال ضرور کریں۔

اس سب کے باوجود صدر ٹرمپ سیاسی ریلیوں، میڈیا بریفنگز اور دیگر مقامات پر ہمیشہ ماسک پہننے سے گریز کرتے رہے ہیں یہاں تک کہ وائٹ ہائوس کے عملے میں اس وائرس کی تصدیق کے بعد بھی وہ اپنی ضد پر قائم رہے۔

یہی نہیں انہوں نے مئی میں ماسک پہننے پر اپنے سیاسی حریف جو بائیڈن کا مذاق بھی اڑایا تھا۔ رپورٹس کے مطابق صدر ٹرمپ نے اپنے معاونین کو بتایا کہ وہ ماسک اس لیے نہیں پہنتے کیوں کہ ایسا کرنے سے وہ کمزور نظر آئیں گے اور میڈیا میں ماسک کے ساتھ تصویر بنوانا ایک برا خیال ہے۔

ہفتے کو بھی جب وہ وائٹ ہاو¿س سے والٹر ریڈ جانے کے لیے باہر نکلے تو انہوں نے صحافیوں کو بتایا کہ وہ صرف اس لیے ماسک پہنیں گے کیونکہ وہ ایک ہسپتال میں ہوں گے اور وہ ایسا باقاعدگی سے کرنے کا کوئی ارادہ نہیں رکھتے۔

’مجھے لگتا ہے کہ جب آپ کسی ہسپتال میں ہوتے ہیں جہاں خاص طور پر اس مخصوص ماحول میں آپ بہت سارے فوجیوں اور لوگوں سے بات کر رہے ہوتے ہیں تو کچھ معاملات میں آپ آپریٹنگ ٹیبل پر نہیں بیٹھ سکتے تو ایسے موقعے پر ماسک پہننا اچھی بات ہے۔‘

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں